جب سے تیرے غمِ جانکاہ سے یارانہ ہوا (غزل) - شکیبؔ احمد

جب سے تیرے غمِ جانکاہ سے یارانہ ہوا
ماسوا زلفِ گرہ گیر سہارا نہ ہوا
متمنی تھے کہ کچھ اور بڑھے گفت و شنید
سہل انگار طبیعت کو گوارا نہ ہوا
رخِ لیلیٰ پسِ محمل متغافِل پئے قیس
ما حَصل درد رہا اور کوئی چارا نہ ہوا
عشق کی سوختہ بختی میں تامُّل کیسا
حسنِ رنگین ادا گر ستم آرا نہ ہوا
حسبِ مقدور رہی سعیِ ستائش پہ شکیبؔ
حسبِ دستور قلم اب بھی ہمارا نہ ہوا
(20 نومبر، 2021)

الفاظ و معانی

جانکاہ: جان کمزور کرنے والا، انتہائی تکلیف دہ | heart-breaking, afflicting, soul-exhausting
گرہ گیر: مُڑی ہوئی یا بل کھائی ہوئی زُلف، گرہ دار زُلف | knotted hair, curly hair
متمنی: آرزومند، خواہش کرنے والا | desirer
گفت و شنید: بات چیت | talks, conversation
سہل انگار:  آرام طلب ، تن آسان | lazy, slug
محمل: ایک قسم کی ڈولی| camel's pillion or litter, saddle of camel
متغافل: وہ جو اپنے آپ کو غافل ظاہر کرے | reckless
ماحَصَل: جو حاصل ہو، نتیجہ | conclusion, summary
سوختہ بختی: بد نصیبی، بد قسمتی، سوختہ بخت بمعنی سیاہ یا جلی ہوئی قسمت | misfortune
تامل: تردد | hesitation, doubt
سعیِ ستائش: تعریف کی کوشش | attempt of appreciation

تبصرے

ایک تبصرہ شائع کریں

شکیبؔ احمد

بلاگر | ڈیویلپر | ادیب از کامٹی، الہند

مشہور اشاعتیں

نگہِ من - میرا فلسفہ

میری شاعری